"بس بے بس"

Posted on at


 

جب نئی بس اتی ہے تو بڑی خوبصورت اور سجی ہوئی ہوتی ہے نۓ پپن سے لے کر اس کے زوال تک اس پر جو جملے لکھے ہوتے ہیں وہ کچھ یوں ہیں-

 

 

نئی بس پر لکھا ہوتا ہے "میں ہوں پہاڑوں کی شہزادی" جب ایک دو سال بعد اس کا میک اپ پرانا اور خراب ہو جاتا ہے تو اس پر لکھ دیتے ہیں "نہ میں ڈسکو نہ میں سادی" چند مہینے گزرنے کے بعد لکھا جاتا ہے "تیز رفتاری ہلاکت کا باعث بنتی ہے " جب ایک سال اور گزر جائے تو لکھا جاتا ہے "نصیب اپنا اپنا " جب یہ سمجھتے ہے کہ گاڑی بہت پرانی ہو چکی ہے تو لکھ دیتے ہیں "خیرنال آ خیر نال جا" جب بہت ہی زیادہ پرانی ہو جاتی ہے تو لکھتے ہیں "زندگی کا کچھ پتا نہیں نہ جانے کس مور پر ختم ہو جائے " پھر اکھڑ میں یہ شعر لکھا ہوتا ہے

 

 

غریبوں کی بستی جا رہی ہے

سوا آٹھ کے بجاۓ سوا دس جا رہی ہے

نہ ٹائر نہ ٹیوبیں ڈز ڈز جا رہی ہے 



About the author

hamnakhan

Hamna khan from abbottabad

Subscribe 0
160