قائد اعظم اور علامہ اقبال

Posted on at


قائد اعظم رحمت الله علیہ


 



قائد اعظم قوم کا رہبرہے


بڑا زہین اور بڑا مدبّر ہے


 


جرات اور ایمان کا پیکر ہے


عظمت کا اور شان کا پیکر


 


عزم کا پکّا ہے وہ ، بات کا سچا ہے وہ


کام کیا کوئی نہ کچا اس نے


 


اس کی سیاست صاف اور ستھری تھی


نہ تھی اس میں کوئی بھی ہیرا پھیری


 



اس نے ہندوستان میں جب دیکھا


غلبہ ہندو اور انگریز کا دیکھا


 


مسلم تھے غفلت کے مارے


اسی لئے تو تھے قسمت کے مارے


 


میرا قائد دونوں سے جا ٹکرایا


قوم کو بھی وہ حرکت میں لایا


 


کیا خوب دونوں کو پھر پچھاڑا اس نے


پاکستان کا جھنڈا گاڑا پھر اس نے


 


پاکستان کا بانی بن کر وہ


ابھرا اپنی قوم کا لیڈر بن کر وہ


 


 


علامہ اقبال رحمت الله علیہ


 


 



اقبال کہ شاکی تھا برہمن کے چلن کا


جو خیال اسے آیا ہند میں مسلم کے ایک وطن کا


 


انگریز کی سب چالوں سے بھی تھا آ گاہ اقبال


مومن تھا وہ ، مسلماں کا یہی خواہ تھا ایک اقبال


 


بن گیا صرف وہ شاعر مشرق افکار سے اپنے


گرما اس نے دیے سینے بھی ، اشعار سے اپنے


 


دکھلا دی اس نے ایک تصویر مسلمانوں کو وطن کی


اس پر ہی کی گئی بعد میں تعمیر وطن کی


 


اس تصویر میں تھا ، رنگ بھرا قائد اعظم نے


دشمن سے لڑی پھر جنگ آزادی اس نے


 



اقبال تھا اگر ہمارا  مصور ، تو معمار تھا ہمارا قائد


مفکر تھا اگر  ہمارا اقبال ، تو علمدار تھا ہمارا قائد


 


کوشش سے انہی کی تو ملا پاک وطن ہے ھم کو


شاداب جہاں یہ وطن اپنی امیدوں کا چمن ہے


 


اسلام کو قوت ملی اس پاک وطن سے


اسلام کو شوکت ملی اس پاک وطن سے


 


اقبال ! یہ جو قائد کی بنائی ھوئی جاگیر ہے


بلاشبہ یہ تیرے ھی ایک حسین خواب کی تعبیر ہے


 


دعا ہے کہ الله تعالیٰ اسے ھمیشہ آباد رکھے


ہر غم سے ، ہر رنج و تکلیف سے اس کو آزاد رکھے


 


آمین .  ثم آمین


 


بلاگ رائیٹر                                                                                                                


نبیل حسن                                                                                                                


 


 


 



About the author

RoshanSitara

Its my hobby

Subscribe 1673
160