مشرف کمانڈو بہادر یا ڈرپوک

Posted on at


١٢ اکتوبر ١٩٩٩ کو آرمی چیف جنرل پرویز مشرف نے مارشل لاء کے نفاذ کا اعلان  کیا . اس وقت کے دو تہائی اکثریت رکھنے والے وزیر اعظم میاں نواز شریف کی حکومت کا تختہ الٹ دیا اور منتحب وزیراظم  کو اٹک کے قعلے کا قیدی بنا دیا .مشرف ١٢ اکتوبر ١٩٩٩ سے ٢٠٠٨ تک پاکستان کے  مطلق العنان  حکمران رہے . اس دوران انہوں نے کیا کچھ نہیں کیا جو بتانے کی ضرورت نہیں ساری دنیا جانتی ہے .                                                                                                                               مشرف  نے اقتدار کے دوران امریکی کاسہ لیسی کی انتہا کی پاکستان کو ایک نام نہاد دیشت گردی کی جنگ میں دکھیل دیا . لال مسجد  کی معصوم طالبات اور طلبہ  کو اپنے غرور کا نشانہ بنایا .بدمست ہاتھی کی مانند عدلیہ پر چڑ دوڑے مگر شکست کا سامنا رہا . ادروں کو ٹھیک کرنے کے چکر میں ملک برباد کر دیا .آج پاکستان کی جو بربادی بنی ہوئی ہے .یہ سب مشرف کمانڈو کا کمال ٹہرا .                                                                                                                        مگر  وقت نے انگڑائی لی اور فرعون کے لہجے میں بولنے والا آمر ملک چھوڑ کر راہ فرار برطانیہ ہوا مگر کرسی کی لالچ اس کو مئی ٢٠١٣ کے عام انتحاب میں حصہ لینے کی ناکام کوشس کی اس چکر میں نااہل ہوا .عدالتوں نے بلایا تو کبھی عدالت سے کمانڈو باگھا تو کبھی چک شیزاد کے فام ہاؤس میں دبکا رہا تو کبھی مکے دکھانے والا آمر اے ایف ایئ سی میں چھپا رہا .اب مقتدر قوتیں اس کو ملک سے باہر بیجھنے کا فیصلہ کر چکی ہیں وہ اب گیا یا کل .                                                                                                                   



About the author

qasimsadiq

no biography haha

Subscribe 1253
160