اذان کی اہمیت

Posted on at


اذان کے معنیٰ اطلاع دینا یا اعلان کرنا ہے۔مسلمانوں کو اللہ کی طرف بُلانے کے لیے جو الفاظ بُلند آواز میں پُکارے جاتے ہیں انہیں اذان کہتے ہیں۔اذان مسلمانوں کا اِمتیازی نشان ہے۔یہ آواز پانچ وقت ہر روز پوری دنیا میں با آواز بُلند کر کے مسلمانوں کو دعوت دی جاتی ہے نماز کے لیے۔اذان میں اللہ  کی بندگی کی شہادت اور اُس کے رسولؐ کی رِسالت اور اقرار اور نماز پڑھنے اور بھلائی پانے کی دعوت شامل ہے۔ واقعہ معراج کے وقت ہی مسلمانوں پر پانچ وقت کی نماز فرض ہو چکی تھی مگر مکہ مکرمہ میں کفار کے                                                                                                       کفروشرک کی وجہ سے مسلمان با جماعت نمازادا نہکر 

ہجرت کے بعد جب آپؐ مدینہ منوّرہ تشریف لے گئے اور  مسجدِ نبوی کی تعمیر کے بعد یہ ضرورت پیش آئی کہ مسلمانوں کو با نماز جماعت کے لیے کسے بُلایا جائے ایک مرتبہ حضرت عبداللہ بن زید انصاریؓ حضورؐکی خدمت میں حاضر ہوئے اور عرض کی یا رسول اللہﷺ میں نے خواب میں دیکھا کہ ایک شخص قبلہ رو ہو کر اللہ اکبر پکار رہا ہے۔حضورؐ نے فرمایا کہ یہ خواب سچا ہے۔                                                                                                                                                                              کچھ دیر بعد حضرت عمرؓ نے بھی یہی خواب آکر سنایا تو آپؐ نے تصدیق فرمائی کے مجھے وحی لے زریعے اذان کی تعلیم دی جا چکی ہے۔چناچہ آپؐ نے حضرت بلالؓ کو اذان کے الفاظ تعلیم فرمائے اور اُن کو اذان دینے پر مامورفرمایا۔ہم مسلمانوں کی زندگی میں اذان کی خاص اہمیت ہے۔اس لیے ہر مسلمان کو چاہیے کے جیسے ہی اذان کے الفاظ سنے تو اُن الفاظ کو مؤذن کے ساتھ ساتھ ہلکی سی           . آواز میں دہرائیں



About the author

160