ایلوویرا

Posted on at


 

ایلوویرا کو گھیکوار بھی کہتے ہے۔ نرسریوں کے علاوہ لوگ اسے گھر میں بھی لگا لیتے ہیں۔ گھر میں ایلوویرا کو لگانا مشکل کام نہیں ہوتا ہے۔ اس پودے کی جڑ جب گملے میں لگائی جائے تو اس کی جلد اور اچھی نشونما کے لیے  ناریل کا بورادا ڈالا جائے تو جلدی پودا بڑھتا ہے۔ ایلوویرا کا ذائقہ کڑوا ہوتا ہے۔ اگر اس میں پانی کی جگہ گلاب کا عرق ڈالا جائے تو اس کا ذایقہ میٹھا ہو جاتا ہے۔

ایلوویرا کے استعمال کے بہت سے فوائد ہیں۔ اسکو جلدی اور جسمانی دونوں بیماریوں کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ ایلوویرا کا اچھا اور موٹا پتہ لے کر اسکا پیلا حصہ کاٹ کر اسکا سبز حصہ استعمال کیا جاتا ہے۔ کیونکہ پیلا حصہ کھایا نہیں جاتا ہے۔ حلدی اور ایلوویرا کے پتے سے ورم اور چوٹ کتم ہو جاتی ہے۔ سر میں سے خشکی ختم کرنے اور بالوں کی موٹائی کے لیے ایلوویرا کا جیل، پیاز کا عرق، لیموں کا عرق ملا کر رات کو سونے سے پہلے سر میں لگائیں اور صبح اٹھھ کر نیم گرم پانی سے سر دھو لیں۔ اور 3 یا 4 گھنٹے بعد شیمپو استعمال کریں۔

ایلوویرا سے شوگر، گیس اور تمام جوڑوں کے دردوں کا ماجون بنتا ہے جو کہ بہت ہی فائدہ مند ہوتا ہے۔ اسکے بنانے کا طریقہ یہ ہے۔

اجزاء:ـ                                                                                   

دیسی گھی                                                1 پائو

سوجی / آٹا                                                آدھا پائو

ایلوویرا کا جیل(بلینڈ کیا ہوا)                         1 پائو

سونٹھھ پائوڈر                                              2 بڑے چمچ

سونف                                                       3 بڑے چمچ

اجوائن                                                     1 بڑا چمچ

ہلدی                                                        1 چٹکی

ترکیب:ـ

          ایک پین میں گھی ڈالیں اور اسے اچھی طرح پکا کر اس میں ایلویرا کا جیل ڈال کر اتنی دیر پکائیں کے اسکا پانی اچھی طرح سے خشک ہو جائے۔ اب الگ سے ایک توے پر سوجی یا آٹے کو اچھی طرح سے بھون لیں۔ پھر پکیں جیل میں سونٹھھ، سونف، اجوائن  ڈال کر بھونیں۔ سب سے آخر میں اس میں ہلدی ڈال دیں۔ ہر  کھانے کے بعد یہ ماجون ¼ چائے کا چمچ کھانے سے درد، شوگر اور تمام جوڑوں کے درد ٹھیک ہو جاتے ہیں۔

 

                                                                                 



About the author

noor-fatima

M a Engnieer

Subscribe 966
160