حلال روزی کی انوار و برکات

Posted on at


حلال کھانے کے اثرات -؛ اگر انسان حلال کھانے کا اہتمام کرے ،چاہے وو چٹنی کے ساتھ روٹی اور دال روٹی ہی کیوں نہ ہو ،تو اس کا اثر یہ ہوگا .کہ حلال کھانے والے کے دل میں اس کا نور پیدا ہوگا ،اور اسی نور کے سبب اس کے دل میں نیکی کے جذبات پیدا ہونگے ،اچھے اچھے کام کرنے کو دل چاہے گا ،اور نیک لوگوں کے پاس بٹہننے کو دل چاہے گا ،نیک بننے کو دل چاہے گا ،گناہوں سے نفرت ہوگی ،آخرت کی فقر پیدا ہوگی ،یہ سب ہیں حلال کھانے کے اثرات ،-                                                                                                          

                                                                                                                                                                 

                                                                                              ہم لوگوں کی بد انتظامی                            

ہم لوگوں کا یہ حال ہے کہ ،ہم میں جو لوگ ملازم پیشہ ہیں ،وو جب تنکھا لٹے ہیں تو گھروں میں ہی ان کی تنکھا ختم ہو جاتی ہے ،یہ نہیں کہ وو اس میں سے کوئی صدقہ خیرات کر رہے ہیں ،یہ اس کو کسی اور نیک کاموں میں خرچ کر رہے ہیں ،نہ عزیزوں کی خدمات ہو رہی ہے ،نہ رشتیداروں سے صلح رحمی ہو رہی ہے ،نہ فقیروں غریبوں کی مدد ہو رہی ہے ،ان میں سے کسی کو بی اگر نیک کام میں خرچ کرنے کو کہا جی تو آگے سے کہتے ہیں ہمارا خود کا گزارا نہیں ہو رہا ،دوسروں کو کیا دیں آج تین ہزار روپی والے کا بی دس ہزار والے کا بی اور پسچاس ہزار والے کا بی گزارا نہیں ہو رہا ،سب کا یہ حال ہے ،کہ مہینے کے آخر میں قرضے لے رہے ہیں ،اور جب پہلی تاریخ اتی ہے تو پھر خوب مرغ مسلم پاک رہے ہوتے ہیں ،پڑوسیوں تک کو بی کوئی نہیں پوچھتا،                                                                                                                

   

                                                                                         پاکیزہ کھانا کھانے کے اثرات                    

غذا جب ھمارے جسم کے اندر جاتی ہے تو یہ ہمارے جسم کو توانایی پوہنچاتی ہے ،اس غذا سے آنکھوں کو توانایی ملتی ہے ،ہاتھ پاؤں دل گردے پورے جسم کو توانایی ملتی ہے ،اسی تارہا سے اللہ تعالیٰ نے ہمارے جسم میں قوت ایمانی اور قوت روحانی رکھی ہے ،حلال غذا سے اس کو بی تقویت پہنچتی ہے ،اس کے نتیجہ میں گناہوں کے جذبات دب جاتے ہیں ،اور نیکی کے جذبات ابر کر اپنا کام شورو کرتے ہیں ،                                                                     

                                                  حلال روزی کی انوارو برقات

ہمارے اندر جو دین کا جذبہ نہیں ہے ،اور دین کی طرف میلان نہیں ہے ،جبکہ ہم جانتے ہیں کہ دین برحق ہے ،اور آخرت برحق ہے اور ہمیں آخرت کی طرف متوجہ ہونا چایی پھر بی دل اس طرف نہیں اتا ،اس کی وجہ یہ ہے کے ہماری غذا میں مشتبہ غذا کا بڑا داخل ہے ،اسی وجہ سے کھانوں میں برقات نہیں ہے کیو کہ اس میں حرام شامل ہے اس لئے حرام اور مشتبہ غذا سے بچنے کی کوشش کریں ،خود بی بچیں اور اپنے گھر والوں کو اپنے بچوں کو بی مشتبہ حرام غذا سے بچائیں کہ کسی کے پیٹ میں بی وبال اور حرام غزہ نہ جانے پائے ورنہ اس وبال سے کبی نہیں بچ سکیں گے ،اللہ ہم سب کو حللال اور طبیب روزی اتا فرمائے اور حرام سے ہم سب کو بچاے ،امین -؛                                    

 

 

 

 



About the author

abid-khan

I am Abid Khan. I am currently studying at 11th Grade and I love to make short movies and write blogs. Subscribe me to see more from me.

Subscribe 8680
160