عورت کے حقوق اسلام میں

Posted on at


حق بات تو یہ ہے کہ خدا نے مرد اور عورت کو انسان ہونے کے ناتے یکساں حقوق دیے ہیں،اور انصاف کا تقاضہ بی یہی ہے.اسلام سے پہلے دورے جاہلیت میں،ایک طویل دور ایسا رہا ہے،جس میں عورت مال کی ترھا ایک چیز سمجھا جاتا تھا.اسے تھوڑی بوہت اہمیت دی بی جاتی تھی تو.ایک خادمہ یا کنیز سے زیادہ نہیں .نہ اسے حصول ای علم کی اجازت تھی.نہ اس کی کوئی زندگی تھی،قانونی حق سے عورت بلکل محروم تھی.اس سے صرف کھانا پکانے کپڑے سینے،دھونے اور بچوں کی پرورش کا کام لیا جاتا تھا.                       

                                                                          ارشادے باری تعالیٰ ہے .
ترجمہ-اے انسانو! ہم نے تم کو مرد و عورت سے پیدا کیا اور تم کو باہمی تہارف کے لئے کنبوں اور قبیلوں میں بانٹ دیا ،(البقرہ )          

                                               دوسری جگہ ارشاد فرمایا         

''اور ان دونوں مرد و عورت کے ذریعے اس نے بوہت سے مردو عورتیں (کائنات )میں پھیلا دیں -''(نساء )        

              

لہذا انسانیت کے لہاز سے بی دونوں برابر ہیں اور،انسانی حقوق میں بی دونوںکے لئے یکساں آزادی ہے .مرد کے مقابلے میں اس اعتبار سے عورت پر قسم کی ایسی پابندی نہیں ہے جس کی وجہ سے وو اپنے اس حق سے محروم یا مرد کے مقابلے پسست سمجھی جاۓ .اسلام نےازدواجی زندگی کے لئے نکاح کے مسلہ میں عورت کے اکرار اور انکار کو کسی تارہا آزادی بخشی ہے جس تارہا مرد کو اتا کی ہے.       

              

اسی تارہا مجبور کن حالت میں جس تارہا مرد کو ''طلاق '' کا حق دیا ہے .اسی طرح عورت کو بی یہ حق خلا کی شکل میں اتا فرمایا ہے .اور بغیر شرعی اور مہسرتی مجبوری کے دنوں کو ایسا کرنا سے منا کیا ہے.-                

اسلام نے قانونی حقوق میں عورت کو مرد کے مساوی ہی رکھا ہے.وو بی مرد کی تارہا جائیداد میں کی ملک ہو سکتی ہے.وو اپنے حقوق حاصل کرنے کے لئے عدالت میں درخواست دائر کر سکتی ہے،وو سیاسی اور شہری معملات میں صلح و جنگ میں اسی طرح حقدار ہے جس ترحہٰ کے مرد حقدار ہے،غرض تمام اس قسم کے معملات میں وو مرد کی تارہا ہی سمجھی جائیگی ...         

             

اس میں کوئی شک نہیں کہ عورت اپنے حقوق انسانی میں مرد کے برابر ہے.اور انسانی دنیا میں ایک مکمل اور مستقل فرد ہے اور اجتماہی زندگی کا ایک حصہ ہے.لیکن ان تمام باتوں کے باوجود عورت صنفی اعتبار سے الگ الگ اور مستقل صنف ہے جس جسکو صنف نازک کہا جاتا ہے،فطرت نے اس لحاظ سے عورت کو جدا کر دیا ہے .کیو کہ عورت عورت ہے مرد نہیں اور مرد مرد ہے عورت نہیں اسلام نے اپنے اخلاقی تعلیم میں عورت کو انسانی حقوق کے باوجود صنفی نازک کے ایتبار سے مرد کے مقابلے میں وو حیثیت دی ہے جو سخت مقابلہ میں نازک کو ملنی چاہیی ،اسی لئے ارشاد باری تعالیٰ ہے .                 

          

{''اور عورتوں کے حقوق مردوں پر اسی تارہا ہیں .جس تارہا مردوں کے عورتوں پر اور مردوں کو عورتوں پر (فضیلت کا )ایک درجہ حاصل ہے.}                                                                                                                                         

عورت مرد کی ناموس ہے چونکہ بار کفلات اور حفاظت قدرت نے مرد کے کندھوں پر رخ دیا ہے اور اسی لئے مرد کو بجا طور پر فضیلت دی گی ہے.یہاں عورت کی کوئی بی حق تلفی نہیں ہوتی جب کہ عورت ہر تارہا سے مرد کے برابر ہے اور اسے ووہی حقوق حاصل ہیں.جو ایک مرد کو .انسانی حقوق میں عورت مرد سے ذرا برابر بی کم نہیں ہے .



About the author

abid-khan

I am Abid Khan. I am currently studying at 11th Grade and I love to make short movies and write blogs. Subscribe me to see more from me.

Subscribe 8680
160