دوستی

Posted on at


آج کل دوستی اس دنیا سے ختم ہوتی جا راہی ہے اور اس کی جگہ خود غرضی نے لے لی ہے دوستی کی تعریف تو یہی کی جاتی ہے کہ ایک انسان دوسرے انسان دکھ سکھ میں بدلنے کے لئے جو جدوجوہد کرتا ہے اس کاوش کو دوستی کہتے ہیں .یہ خوبی صرف انسانوں میں ہے پایی جاتی ہے،-جانوروں میں یہ صفت موجود نہیں ،-آج کل جیسے جیسے وقت گزرتا جا رہا ہے ،انسان جانور اور پھر جانور سے بھی بدتر ہوتا جا رہا ہے-ویسے ویسے انسان کی صفت بھی ختم ہوتی جا رہی ہے،

یہاں میں دوستوں کی چند اقسام بیان کرنا کہونگا ،جن کا اگر آپ کی حقیقی زندگی کے ''دوستوں''سے موازنہ کرینگے تو دوستی کی پرک میں اضافہ ہو گا

                                                زبانی کلامی دوست 

دوستوں کی یہ قسم اس بھری دنیا میں بھری پڑی ہے،یہ دوست جب آپ سے ملتے ہیں تو اس قدر طابق سے ملتے ہیں کہ بے اختیار آنکھوں میں آنسو لانے کا جی چاہتا ہے،دوستوں کی یہ قسم آپ کے سامنے ہی آپ کی تعریف اس قدر بلند پل تعمیر کرتی ہیں ،کہ آپ خود کو ہواؤں میں اڑتا محسوس کرینگے ،دنیا کی بری سے بری مثبت میں ساتھ نہ چھوڑنے کی ٤٢٠سے بھی زیادہ قسمیں کھایی جاتی ہیں،لیکن مثبت کے وقت ایسے غائب ہوتے ہیں -جیسے گدھے کے سر سے سنگھ غائب ہونے کی مثل ان کے لئے کہی گی ہے،

                                                  پیٹو دوست

     

دوستوں کی یہ قسم بوہت زیادہ پیی جاتی ہے -یہ دوست ہمیشہ کھانے کے وقت ہی ٹپکتے ہیں،ہمیشہ اپ کے کاروبار کے لئے بھاری برکم دوائیں کرتے نظر ینگے -کبھی بھولے سے بھی کھانا کھانے کے لئے نہ نہیں کہیں گے.کھاتے وقت بوہت زیادہ باتیں کرینگے ،جن میں زیادہ تر باتیں آپ کے سخی پن کی ہونگی -ان کا ایک ہی نعرا ہوتا ہے '''جن کے گھر دانے انہی کے سرانے -اور جیسے ہی دانے ختم ان کے آنے ختم

                                                                                                                                                           

                                                              حقیقی دوست

جی ہاں ،دوستوں کی یہ قسم ہمیشہ نہ پسندیدہ رہی ہے -نہ ہی یہ خوش آمد پسند ہوتے ہیں،اور نہ ہی آپ کی غلطیوں کو پسند کرتے ہیں .-پتا نہیں ان کو کس قسم کی کھجلی ہوتی ہے-کہ اکثر ہمیں برائیوں سے بچنے کی تلقین کرتے رهتے ہیں،-مثبت کے وقت بھی ساتھ نہیں چھوڑتے ،اور اگر مدد کرتے بھی ہیں تو اسی طرح کہ ان کا نام سامنے نہ آیئے اور ہمیں کسی قسم کا احساس سہرمندگی بھی نہ ہو -اور اپنا ہر وعدہ بھی پورا کر دیتے ہیں -پھر بھی ان کا نام ہماری اچھی لسٹ میں نہیں ہوتا شاید اسی لئے ہم خود ایک اچھے دوست نہیں شاید اسی کا نام نفرت ہے ،حالانکہ ہمہیں بھی اس دوست کی قدر کرنی چاہیئے ،کیوں کہ ایک مخلص دوست اللہ کی رحمت ہوتا ہے ،اس لئے الله کی رحمت کی قدر کرنی چاہیئے -                                                                    

                                                                                       



About the author

abid-khan

I am Abid Khan. I am currently studying at 11th Grade and I love to make short movies and write blogs. Subscribe me to see more from me.

Subscribe 8680
160