قرآن مجید اور غیر مسلم مفکرین

Posted on at


خدائے تعالیٰ کا جو تخیل بلحاظ صفات ، قدرت ، علم ، ربوبیت اور وحدانیت قرآن میں ہے ویسا کہیں نہیں۔ قرآن میں وہ اصول ہیں جو علمی قوتوں کا سرچشمہ ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قرآن تحریف سے محفوظ ہے۔            ڈاکڑ راڈیل


عربوں نے اس قرآن کی مدد سے اس وقت جب کہ دنیا میں چاروں طرف اندھیرا چھا یا ہوا تھا ، بنی نوع انسان کو روشنی دکھائی۔                                                                                     ڈاکڑ وکڑ عمانویل ڈیوس


قرآن ایک مذہبی ، تمدنی ، ملکی ، تجارتی ، دیوانی ، فوجداری کا ضابطہ ہے۔ قرآن ایک بے نظیر قانون ہدایت ہے۔ فطرت انسانی کے موافق ہیں۔                                                                          جان ڈیوس پورٹ


قرآن کی دلفریبی بہ تدریج فریفتہ کرتی ہے پھر متعجب کرتی ہے اور پھر ایک رقت آمیز تحیر میں ڈال دیتی ہے۔                                                                                                                        گوئٹے


ہو آداب واصول جو فلسفہ و حکمت پر قائم ہیں۔ جو دنیا کو عدل وانصاف ، نیکی اور صلح کی تعلیم دیتے ہیں وہ سب قرآن میں موجود ہیں۔ قرآن اعتدال اور میانہ روی کا راستہ دکھاتا ہے۔ قرآن اخلاقی کمزوریوں سے نکال کر فضائل کی روشنی میں لاتا ہے۔                                                               موسیو سیدیو


قرآن ایسے وقت میں نازل ہوا جب کہ دنیا میں ہر طرف تاریکی اور جہل کی عملداری تھی۔ انسانی اخلاق کا جنازہ نکل چکا تھا۔ قرآن نے ان تمام گمرائیوں کو مٹایا جن کو دنیا پر چھائے مسلسل چھ صدیاں گزرچکی تھیں۔                                                                                                        آسٹین لی لین پول


قرآن نے اعلیٰ اخلاق کی تعلیم دی۔ اصول مدنیت ، علوم اور حقا ئق سیکھائے ، ظالموں کو رحمدل ، وحشیوں کو پرہیز گار بنا دیا۔ اگر یہ کتاب شائع نہ ہوتی تو اخلاق انسانی تباہ ہوجاتا اور دنیا کے باشندے برائے نام انسان رہ جاتے۔


قرآن عالم انسانیت کا بہترین راہبر ہے۔ اگر صرف یہی کتاب دنیا کے سامنے ہوتی اور کوئی ریفارمر نہ ہوتا تو بھی عالم انسانیت کی رہنمائی کے لئے کافی تھی۔                                                                                                                       ٹا لٹائے


قرآن نے امن و سکون ، الفت و محبت کے جذبات کی نشو و نما دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بادہ عیش کے متوالوں کو پرہیز گار بنا دیا۔                                                                                                            طامس کارلائل


قرآن اخلاقی ہدایتوں اور دانائیوں سے معمور ہے۔ وہ اخلاق جو شرف انسانیت ہیں۔ مثلاً راست بازی ، پرہیز گاری ، رحم و کرم ، عفت و عصمت یہ سب قرآن میں موجود ہیں اور وہ اخلاق بھی جن کا تعلق دنیاوی ترقی سے ہے۔ عزم و استقلال ، ہمت و شجاعت ان سے بھی قرآن کا دامن بھرپور ہے۔ بہر کیف قرآن ایک حیرت انگیز قانون ہدایت و اخلاق ہے۔                                                                    پروفیسر ہربرٹ رائل


کوئی انسان قرآن کا مثل نہیں لاسکتا یہ لا زوال معجزہ ہے جو احیائے موتی سے بڑھ کر ہے۔  ڈاکڑ سیل


قرآن نے صفائی ، طہارت اور پاک بازی کی وہ تعلیم دی کہ اگر اس پر عمل کیا جائے تو دنیا بیماریوں سے محفوظ ہوجائے۔                                                                         ایکم جی بولف ۔ جرمن فاصل


قرآن وحدانیت کا سب سے بڑا نقیب ہے۔ ایک جدید فلسفی اگر کوئی مذہب قبول کر سکتا ہے تو وہ قرآن کا مذہب ہے۔                                                                                                                  ڈاکڑگین


قرآن مذہبی قواعد و احکام ہی کا مجموعہ نہیں۔ اس میں اجتماعی اور معا شرتی احکام بھی ہیں اور وہ عالم انسانیت کے لئے نفع بخش ہیں۔                                                موسیو او چین ۔ فرانسیسی فاضل


تمام اہل علم اس پر متفق ہیں کہ قرآن اپنی گو نا گوں خوبیوں کے لحاظ سے ایک حیرت انگیز کتاب ہے۔                                                                                                          جے جے بول


قرآن کی فصا حت و بلاغت نئے نئے مسلمان پیدا کرتی ہے۔                                     ڈاکڑ لیبان


اس زمانے میں کوئی کتاب کام آئی تو وہ قرآن ہے۔ اس کے آگے پوتھی پران کچھ بھی نہیں۔   شری گرانتھ


تورات ، زبور و انجیل کو ہم نے بغور پڑھا ہے اور ویدوں کو بھی دنیا کے لئے جو کتاب ہدایت کا مل بن سکتی ہے وہ قرآن ہے۔                                                                                        جنم ساکھی


وہ وقت دور نہیں جب قرآن مسلمہ صداقتوں اور روحانی کرشموں سے دنیا کو اپنالے۔   رابندر ناتھ ٹیگور


قرآن کو الہامی کتاب تسلیم کرنے میں مجھے ذرا تامل نہیں۔                                        گاندھی جی



About the author

muhammad-haneef-khan

I am Muhammad Haneef Khan I am Administration Officer in Pakistan Public School & College, K.T.S, Haripur.

Subscribe 4127
160