کھیل

Posted on at


کھیل انسانی زندگی میں بنیادی حثیت رکھتےہیں۔انسانی صحت کا دارومدار جسمانی کام کاج،ورزش اور کھیل کود پر ہے۔کھیل کود کی وجہ سے انسان کا وجود چاق چوبند اور مضبوط ریتا ہے کھیل نہ صرف ہمیں صبروتحمل سکھاتے ہیں بلکہ کھیل کھیلنے سے حوصلہ مندی اور برداشت کرنے کے ساتھ ڈّٹّ کر مقابلہ کرنے کا جزبہ بھی پیدا ہوتا ہے۔کھیل ہمیں مل جل کر زندگی گزارنے کا درس بھی دیتے ہیں۔دنیا کے ہر حصے میں کھیل کو انسانی زندگی میں بہت اہمیت حاصل ہے۔ کچھ کھیل انسان کے بچپن کی زندگی کے ساتھ تعلق رکھتے ہیں اور کچھ کھیلوں کا تعلق لڑکپن اور جوانی کے ساتھ ہوتا ہے۔   مختلف علاقوں میں رہنے والے لوگوں لے لیے الگ الگ کھیلوں کو اہمیت دی جاتی ہے۔                                                                                                                                                                                                                                           کچھ کھیل ایسے ہیں جو دنیا تمام علاقوں کھیلے جاتے ہیں اور کچھ کھیل صرف کسی خاص علاقوں سے تعلق رکھتے ہیں۔فٹ بال،کرکٹ، ہاکی، ٹینس،رسہّ کشی،والی بال،تیراکی اور کُشتی وغیرہ کے کھیل عالمی سطح پر مقبول کھیل ہیں۔ پاکستان کا قومی کھیل ہاکی ہے۔  فٹ بال، کبڈی،ہاکی ،کُشتی وغیرہ ملک کے معروف کھیل ہیں جنھیں بچے اور نو جوان بہت شوق سے کھیلتے ہیں۔  بعض کھیل شہری بچوں میں بڑی اہمیت حاصل رکھتے ہیں مثلاً بیڈمینٹن،ہاکی وغیرہ ۔اور دیہاتی بچے زیادہ تر آنکھ مچولی،گلّی ڈنڈا،کوکلاچھپاکی، گدّااور ککلی وغیرہ زیادہ شوق سے کھیلتے ہیں۔                                                                                                                                           آنکھ مچولی ہمیشہ سے دیہاتی بچوں کا پسندیدہ کھیل ہے۔اس کھیل کو چھپن چھپاکی بھی کیتے ہیں۔اس کھیل کو کھیلنے کے لیے کوئی وقت مقرر نہیں کرنا پڑتا۔ بچے یہ کھیل دن رات میں کبھی کبھی بھی کھیل سکتے ہیں۔یہ کھیل ایک ٹاس سے شروع ہوتا ہے۔جو بچہ ٹاس ہار جاتا ہے وہ اپنی آنکھیں بند کر کے کھڑا ہو جاتا ہے اور باقی کے بچے اِدھراُدھر چھُپ جاتے ہیں۔تھڑی دیر بعد ٹاس ہارنے والا بچہ اپنی آنکھیں کھول کر اپنے چھُپے ہوئے ساتھیوں کو تلاش کرتا ہے۔وہ سب سے پہلے جس بچے کو تلاش کرکہ اس کو چھولے      تو بچہ ہار جاتا ہے اور پھر اُس کو باری دینی پڑتی ہے اور اس طرح سے یہ کھیل جاری رہتا ہے۔ 



About the author

160