عیسی کا قصّہ - حصّہ دوئم

Posted on at


عیسی علیہ سلام کا قصّہ – حصّہ دوئم                                    


 


حضرت زکریا علیہ سلام نے جب حضرت یحییٰ علیہ سلام کی بشارت سنی تو عرض  کیا کہ اے خدایا ، میں تو بہت بوڑھا ھو گیا ہوں اور میری شریک حیات بھی بانجھ ہے تو ھمارے ہاں بچہ کیسے پیدا ھو گا ؟ ؟ آپ علیہ سلام کو جواب ملا کہ اسی حالت میں ھی ھو گا کیونکہ الله تعالیٰ جو چاہتا ہے ، وہ کر دیتا ہے


 


حضرت زکریا علیہ سلام نے جب نشانی کے متعلق پوچھا تو اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ تم لوگوں کے ساتھ تین روز تک کوئی بات چیت نہ کر سکو گے مگر اشارے سے . چنانچہ یہ بشارت پوری ھوئی اور زکریا علیہ سلام کے گھر یحییٰ علیہ سلام کی پیدائش ھوئی


 


بعد میں ایک فرشتے نے حضرت مریم کو خبر دی کہ حق تعالیٰ نے تجھے جہان بھر کی عورتوں سے منتخب فرمایا ہے اور اپنے ایک کلمہ کی بشارت دی ہے ، جس کا نام مسیح عیسی ابن مریم ھو گا . وہ بیشک دنیا اور آخرت میں با عزت ھو گا اور الله تعالیٰ کا مقرب بندہ ھو گا . وہ لوگوں کے ساتھ کلام کرے گا ، گہوارے میں بھی اور بڑی عمر میں بھی . حضرت مریم نے اللہ رب العالمین سے عرض کیا کہ اے پروردگار ، مجھ کو کسی بشر نے ہاتھ نہیں لگایا میرے ہاں بچہ کیسے ھو گا ؟ ؟


 


جواب ملا کہ اللہ رب العزت کی ذات ہر چیز پر قادر ہے ، سو ایسا ھی ھو گا


ھم اسے آسمانی کتابوں کی تعلیم دے گے اور بنی اسرائیل کی طرف پیغمبر بنا کر بھیجیں گے . بیشک حضرت عیسی ( علیہ سلام ) کی پیدائش عجیبہ الله تعالیٰ کے نزدیک حضرت آدم ( علیہ سلام ) سے ملتی جلتی ہے جیسا کہ حضرت آدم ( علیہ سلام ) کو مٹی سے بنا کر حکم دیا کہ جاندار ھو جاؤ . سو وہ جاندار ھو گئے


 


ایک دفعہ حضرت مریم اپنے گھر والوں سے علیحدہ ھو  کر ایک مکان میں غسل کے لئے گئیں . گھر والوں کے آگے انہوں نے پردہ ڈال لیا . ایک فرشتہ انسانی صورت میں نمودار ھوا . مریم نے کہا کہ میں خداۓ رحمان کی پناہ چاہتی ھوں تجھ سے ، تو چلا جا یہاں سے . وہ بولا کہ میں تیرے رب کا بھیجا ھوا ہوں اور ایک پاکیزہ لڑکا تجھے دینے کے واسطے آیا ھوں


 


مریم نے حیرانی سے کہا کہ میں بن بیاہی بھی نہیں ھوں اور نہ ھی بدکار ھوں . میرے ہاں لڑکا کس طرح ھو جاۓ گا . فرشتے نے کہا کہ تمھارے رب کریم کی طرف سے یونہی ھو جاۓ گی . سو حضرت مریم کے پیٹ میں لڑکا رہ گیا


 


وقت آنے پر حضرت مریم اپنے گھر سے دور الگ کسی جگہ پر چلی گئیں اور وہاں کھجور کے ایک خشک درخت کے نیچے بیٹھ گئیں اور گھبرا کر کہنے لگیں کہ کاش ، اس حالت سے پہلے ھی میں مر گئی ھوتی اور کسی کو یاد بھی نہ رھتی


 


اس حالت میں حضرت جبرائیل ( علیہ سلام ) نے انکو پکارا اور کہا کہ تم غم نہ کرو . تمھارے رب نے تمھارے پاس نہر پیدا فرمائی ہے . اس کھجور کے تنے کو پکڑ کر اپنی طرف ہلاؤ . اس سے تم پر تازہ خرما جھڑیں گے اور اس پھل کو کھا کر پانی پیو اور اپنی آنکھیں ٹھنڈی کرو، کوئی آدمی تم سے اعتراض کرے تو کہو کہ آج میں میں الله تعالیٰ کے واسطے روزے کی منّت مان رکھی ہے اس لئے کسی کے  ساتھ نہیں بولوں گی


 


بلاگ رائیٹر                                                                                                                             


نبیل حسن                                                                                                                              



About the author

RoshanSitara

Its my hobby

Subscribe 1673
160