نعمتیں لازوال دیتے ہیں

Posted on at


 

زہن میں بات ڈال دیتے ہیں     مجھ کو حسن خیال دیتے ہیں

ان عشاق نام پر ان کے    جان و اولاد و مال دیتے ہیں

جب بھی چھڑتا ہے ذکر یکتائی     ہم انہی کی مثال دیتے ہیں

ڈگمگاتا      سفینہ    امت      وہ بھنور سے نکال دیتے ہیں

وہ تو وہ ہیں، غلام بھی انکے     جان مردوں میں ڈال دیتے ہیں

اک نظر سے سیاہ کاروں کے     قلب و قالب اجال دیتے ہیں

وہ ہیں ایسے سخی جو منگتوں کو    نعمتیں لازوال دیتے ہیں

انکی بخشش کا ہے عجب انداز     لعل گدڑی میں ڈال دیتے ہیں

بے نوا و گدائے مسکین کو    خسروانہ جلال دیتے ہین

پاک کرتے ہیں عیب داروں کو     ناقصوں کو کمال دیتے ہیں

لشکر حق کو حفظ حق کے لیے    تیغ دیتے ہیں ڈحال دیتے ہیں

میں تو برباد ہو چکا ہوتا    ہر مصیبت وہ ٹال دیتے ہیں

مجھ کو طارق مری طلب سے سوا

شاہ جود و نوال دیتے ہیں 



About the author

sss-khan

my name is sss khan

Subscribe 1674
160